تازہ ترین
نواز شریف کی مہم جوئی جمہوریت کیلئے خطرناک ثابت ہوگی: زاہدہ ملک اعوان         عدالتی فیصلوں سے نواز شریف کی مقبولیت میں اضافہ ہوا، عہدے آنی جانی چیزیں ہیں: ظہیر الدین ظفر راں         پاکستان پریس کلب مڈلینڈ زانٹرنیشنل کا اہم سالانہ اجلا س ۔ با ہمی مشاورت کے بعد تنظیم نو کا اعلان آصف محمود برا ٹلوی صدر ، راجہ ناصر محمود جنرل سیکرٹری         ’مسلم اشتہار‘ کیا جرمن معاشرہ اسلام پسندی کی طرف جا رہا ہے؟         انتخابی اصلاحات کیس میں سپریم کورٹ کا فیصلہ عین میرٹ اور حقیقی معنوں میں پاکستانی عوام کی امنگوں کی ترجمانی کرتا ھے-محمد شہباز ملک         سابق جنوبی افریقی بلے باز ہرشل گبز کویت کرکٹ ٹیم کے کوچ مقرر         جموں کشمیر لبریشن فرنٹ برطانیہ کے زیراہتمام لوٹن میں حریت پسند کشمیری راہنما مقبول بٹ شہید کی چونتیسویں برسی کا انعقاد کیا گیا         پاکستان اسپورٹس ایسوسی ایشن کویت کے زیر اہتمام تیسرے بلڈ ڈونیشن کا انعقاد         لودھراں میں عوام نے جھوٹی سیاست کے تابوت میں آخری کیل ٹھونک دی، اقبال شاہ قریشی کی کامیابی نے نواز شریف کی اہلیت کا فیصلہ کر دیا، لیگی رہنماؤں خالد گوندل، رزاق چھنی، فیصل چیچی، راشد بھٹی، دلشاد چھنی اور اکرام شہزاد کا مشترکہ بیان         نواز شریف کسی پارٹی صدارت کا مرہون منت نہیں ۔ پاکستان اس طرح کے فیصلوں کا متحمل نہیں ہو سکتا نواز شریف جس پر ہاتھ رکھیں گے وہی جیتے گا۔ ۔ مسلم لیگ (ن) فرانس         لودھران کے عوام نے مسلم لیگ ن کے امیدوار کو بھاری اکثریت سے کامیاب کروا کر پاکستان میں خوشحال مستقبل کی بنیاد رکھ دی ہے، راجہ شفیق پلاہلوی         پیرس ادبی فورم اور ہیومن رائٹس آرر ڈان ایسوسی ایشن کے زیر اہتمام شام محبت تقریب کا انعقاد         کشمیر کونسل ای یو کنن۔پوشپورہ (مقبوضہ کشمیر) کے واقعے کو یورپ میں ایک بار پھر اٹھانے کے لیے جمعہ کو مہم شروع کر رہی ہے         جنوبی کوریا: دہنگ انچھن میں اورینٹل ریسٹورنٹ کی افتتاحی تقریب افتتاح چیرمین پاکستانی کمیونٹی کوریاشفیق خان کیا         نیویارک میں اوکاڑہ سے تعلق رکھنے والے رکن پنجاب اسمبلی میاں منیر (ڈسٹرکٹ چئیرمین اوورسیز پاکستانی کمیشن ، پارلیمانی سیکرٹری ایکسائز اینڈ ٹیکنیشن )سے سینئر صحافی محسن ظہیر کی ملاقات        

خود غرض لومڑی

خود غرض لومڑی

مرغی،لومڑی کو جھاڑیوں کے پاس بیٹھی دیکھ کر ٹھٹک گئی۔وہ محتاط قدموں سے یہ دیکھنے کے لئے آگے بڑھی کہ لومڑی یہاں کیا کررہی ہے۔اس نے دیکھا،لومڑی کی دُم ایک لوہے کے شکنجے میں پھنسی ہوئی ہے،جسے وہ چھرانے کی کوشش کر رہی ہے۔اتنے میں لومڑی کی نظر مرغی پر پڑگئی۔

جاوید اقبال:
مرغی،لومڑی کو جھاڑیوں کے پاس بیٹھی دیکھ کر ٹھٹک گئی۔وہ محتاط قدموں سے یہ دیکھنے کے لئے آگے بڑھی کہ لومڑی یہاں کیا کررہی ہے۔اس نے دیکھا،لومڑی کی دُم ایک لوہے کے شکنجے میں پھنسی ہوئی ہے،جسے وہ چھرانے کی کوشش کر رہی ہے۔اتنے میں لومڑی کی نظر مرغی پر پڑگئی۔”آؤ آؤ بہن!کیا حال ہے؟لومڑی نے چہرے پر مسکراہٹ سجاتے ہوئے کہا۔”یہ کیا ہوا؟“ مرغی نے لومڑی کی شکنجے میں پھنسی ہوئی دم کی طرف اشارہ کرتے ہوئے پوچھا۔
لومڑی نے کہا:”بہن! اس نامراد شکنجے کے ساتھ گوشت کا ٹکڑا لگا ہوا تھا۔میں نے اسے کھانا چاہا تو ایک زور کی آواز آئی اور میری دُم اس میں پھنس گئی۔“
مرغی نے کہا:”لیکن تم تو بہت چالاک اور ذہین ہو،تم اس میں کیسے پھنس گئیں؟“
مرغی سوچ رہی تھی کہ کہیں لومڑی کوئی چال نہ چل رہی ہوں۔“
لومڑی بولی:”بہن!لالچ بُری بلا ہے۔گوشت کا ٹکڑا دیکھ کر میرا دل للچا گیا۔اگرتم میری مدد کروتومیں شکنجے سے آزاد ہوسکتی ہوں۔“
مرغی نے کہا:”ابھی دو دن پہلے تم نے میرے ننھے منھے بچے کو پھاڑ کھایا تھا،پھر بھی مجھ سے مدد کی توقع رکھتی ہوں۔“
لومڑی نے کہا :”بہن مجھ سے غلطی ہوگئی۔میں تم سے معافی مانگتی ہوں۔دیکھو میرا تم پر ایک احسان بھی تو ہے!“
”کیسا احسان؟“مرغی نے حیرت سے کہا۔
”دیکھو میری وجہ سے تم اور تمہارے بچے محفوظ ہیں۔میں تمھاری ہمسائی نہ ہوتی تو لوگ تمھیں اورتمھارے بچوں کو پکڑ کرلے گئے ہوتے۔“
لومڑی کی بات سن کر مرغی سوچ میں پڑگئی کہ لومڑی کی مدد کرے کہ نہ کرے۔
مرغی کو سوچ میں ڈوبا دیکھ کر لومڑی چالاکی سے بولی:بہن! کیا سوچ رہی ہوں،دیر نہ کرو رنہ شکاری آجائے گا۔میری توجان جائے گی،میرے ساتھ تم اور تمھارے بچے بھی نہ بچ سکیں گے۔“
مرغی،لومڑی کی چال میں آگئی۔وہ اس کے پاس چلی آئی اور غور سے اس کی پھنسی دُم کو دیکھنے لگی۔اس نے لوہے کے شکنجے کا اپنی چونچ سے ٹھونگیں ماریں،پنجے سے کریدا،پھر بولی:”یہ تو بہت مظبوط ہے،میں اسے نہیں کھول سکتی۔“
لومڑی سر گھما کر بولی:”لو،میں بھی اپنے پنجے سے زور لگاتی ہوں۔“
دونوں نے مل کر زور لگایا تو شکنجے کا اوپری حصہ کچھ اوپر اُٹھا۔لومری نے اپنی دُم کو باہر کھینچ لیا اور جلدی سے شکنجے کو چھوڑدیا،جس سے شکنجے کی نوک ٹھک سے مرغی کے پنجے پر گری اور اس کا پنجہ شکنجے میں پھنس گیا۔
لومڑی نے اپنی دُم کو جھاڑا،سہلایا۔اس کی دُم کے بہت سارے بال اُکھر گئے تھے ۔وہ اپنی زخمی دُم اُٹھائے جنگل کی طرف چل پڑی۔
لومڑی کو جاتے دیکھ کر مرغی نے کہا:”بہن کہاں چلیں،میرا پنجہ تو چھڑاتی جاؤ؟“
لومڑی بولی:”بہن میری دُم پر زخم ہو گیا ہے۔میں ذرا گھر جا کر مرہم پٹی کرلوں،پھر آکر تمہیں آزاد کرتی ہوں۔“یہ کہہ کر لومڑی جنگل کی طرف بڑھ گئی۔اس کا رُخ مرغی کے گھر کی طرف تھا،جہاں مرغی کے بچے اکیلے تھے۔
وہ خیالوں میں ہی ان کے مزے دار گوشت کے چٹخارے لیتی تالاب کے کنارے پہنچی اور پھر جیسے ہی اس نے مرغی کے گھر میں داخل ہونا چاہا۔ایک کالی بلاسی اس پرجھپٹی،اس سے پہلے کہ وہ کچھ سمجھتی،اسے زور کا ایک دھکا لگا۔وہ اُڑکر دور جا گری۔اسی وقت اس نے بھیا ریچھ کو مرغی کے گھر سے نکل کر اپنی طرف آتے دیکھا تو دُم دبا کر وہاں سے بھاگی۔
مرغی،بھیاریچھ کو اپنے گھر اور بچوں کی حفاظت کا کہہ کر گئی تھی۔بھیاریچھ مرغی کو ڈھونڈنے نکلے۔جھاڑیوں کے پاس انہیں مرغی مل گئی۔انہوں نے اس کا پنجہ شکنجے سے نکالا اور اسے اس کے گھر تک چھوڑنے آئے۔
لومڑی ریچھ کے ڈر سے یہ جنگل ہی چھوڑ گئی اور کسی دوسری جگی جا بسی۔

Related posts